کہانی محبت کی

کہانی محبت کی

تمہيں وہ رات ياد ہے ؟ زندگي کي وہ حسين ترين رات، وہ رات کي جس کا ارماں شاءد برسوں سے تھا، وہ رات ايسي کي بس نہيں چلتا تھا کہ وقت کہيں تھم جاءے، وہ رات کہ جس کے بارے ميں سنا بہت تھا پڑھا بہت تھ۔۔ کتنے برسوں کے انتظار کے بعد وہ رات ہم دونوں کي زندگي ميں آءي تھي ناں۔۔۔۔
ہاں ميں اس ہي رات کي بات کر رہا ہوں جس دن ميرا نام تمہاري زندگي کا اميں ٹھہرا تھا اور جب يہ وہ ہي رات تھي جس ميں دنيا کے سامنے ہم ايک بندھن ميں بندھ گءے تھے۔۔ ايسا بندھن جو نازک بھي

تھا اور اٹوٹ بھي ہاں يہ وہ ہي رات تھي جس دن قدرت نے تمہيں ميري شريک سفر کا روپ سونپ ديا تھ۔۔۔۔
ميں اس ہي رات کي بات کر رہا ہوں جس رات تمہاري سکھياں تمہيں کمرے ميں چھوڑ گءي تھيں وہ ہي کمرہ جو چاروں طرف نہ جانے کتنے گلابوں کي خوشبو سے مہک رہا تھ۔۔۔ ہر طرف بھيني بھيني گلابوں کي خوشبو مہک رہي تھي۔۔۔ اور ايک تم تھيں ميري جاناں جواس وقت تنہاءي کے بہتےسروں کے جھرنے کے پاس خاموشي کي مہکتي فضاء ميںنظروں ميں چاہت کي ساري شدتيں جلاءے ہوءےاپنے جزبات کو قابو ميں کرتے ہوءے ان ہي جزبات کو جو ايک دوسرے کے ليءے دونوں کے دلوں ميں تھے نظروں ميں چاہت کي محبت کي آرزو کي ساري ساري ساري ۔۔۔ شدتيں جلاءے ہوءے جزبات سے پاگل ٹوٹي ٹوٹي سے اٹکي اٹکي سي جزبات سے پاگل بے ربط سانسوں کو قابو کرتے ہوءے ہجلہ عروسي ميں ملبوس سر پر گھونگھٹ ڈھالے ہوءے کہ جس ميں تمہارا چہرہ پوري طرح چھپا ہوا تھ۔۔ بيٹھي ہوءي ميري آمد کي منتظر تھيں۔۔۔۔
نہ جانے ميرے بھي دل ميں کتنے جزبے جاگ اٹھے تھے، جذبات کا ٹھاٹھيں مارتا سمندر جو شاءد تم سے ملنے کا منتظر تھ۔۔۔” مل جاءيں اس طرح دو لہريں جس طرح پھر ہوں نہ جدا يہ وعدہ رہا ‘ کے مصداق نہ جانے دل ميں کتنے ہي ديءے ميرے بھي روشن ہو رہے تھے۔۔۔۔ ميں بھي اپنے دوستوں سے چاہنے والوں سے ملنے کے بعد۔۔۔ اس رات کا حصہ بننے ، کمرے ميں وارد ہوا تھا۔۔۔۔

کمرے کا دروازہ بند ہونے کے بعد جيسے چاروں طرف خاموشي سي چھا گءي تھي۔ وہ لوگ جو گانے گا رہے تھے، وہ ساري رسميں، وہ ساري باتيں، وہ سارے رشتے داروں کا ملنا، وہ شور اچانک ۔۔۔ سب کچھ تھم سا گيا تھ۔۔۔ ہر طرف سناٹا اور کمرے ميں ہر سو پھيلي ہوءي مسحور کن گلابوں کي خوشبو اور مسند پر ہجلہ عروسي ميں ملبوس شرم و حياء کيا پيکر تم۔۔۔۔

جانتي ہو اس رات۔۔۔ اس رات ميں اپنے تمام تم جزبوں کو سميٹ کر ، ان تمام ارمانوں کو دل ميں ليءے، نہ جانے کتني محبتوں کو ليءے[ايسا ملن پھر ہو نہ ہو ] کے مصداق تمہارے پاس آ کر بيٹھ گيا تھ۔۔۔
ميرا بھي حال تم سے کچھ مختلف نہ تھا۔۔۔۔ہاں وہ ہي حال سانسيں بکھري بکھري سي بے ربط سي اور ۔۔۔ جيسے ہي ميں تمہارے پاس آ کر بيٹھا تھا۔۔۔ تب تمہاري بے ربط سي ٹوٹي پھوٹي سي سانسيں يک دم ساکت ہو گءي تھيں۔۔۔
تمہاري سرخ چوڑيوں کي جو کہ تمہاري سرخ عروسي لباس سے کتنا ميل کھا رہي تھي۔۔۔ اچانک ان سرخ چوڑيوں سے آتي شوخ و شنک آواز ساکت ہو گءي تھي۔۔۔۔

نہ جانے کتني محبت سے کتني چاہت سے ميں نے تمہارا آنچل ہٹا کر تمہيں ايک نظر ديکھا تھ۔۔۔۔اور جانتي ہو تم نے۔۔۔ ہاں تم نے۔۔۔ صرف ايک نظر مجھے مسکرا کر ديکھا تھ۔۔۔۔
ميں کبھي بھي اس نظر کو ہاں اس شرارت بھري تيکھي نظر کو جو شرم و حياء کا پيکر تھي۔۔۔ اس نظر کو بيان کر ہي نہيں سکتا ۔۔ تمہاري اس مسکراہٹ کي مثال ہي کيا دوں ميں۔۔۔۔
نہ جانے اس وقت ميرے ذہن ميں کتني ہي شاعري گشت کر رہي تھي۔۔۔ نہ جانے کتني ہي باتيں ذہين ميں آ رہي تھي۔۔۔ ” سہاگ رات ہے گھونگھنٹ اٹھا رہا ہوں ميں سمٹ رہي ہے تو شرما کے اپني بانہوں ميں” کي سي کيفيت وہاں بھي تھي ۔۔۔۔

اور ۔۔۔ اور اس کے بعد کتني دير کے بعد ميں تم سے گويا ہوا تھ۔۔ اور منہ دکھاءي کے طور پر تمہيں ايک چھوٹي سي رنگ تمہارے ہاتھوں کو اپنے ہاتھوں ميں تھام کر ۔۔ تمہاري نازک سي انگليوں کي نظر کر دي تھي۔۔۔

ايسا لگ رہا تھ۔۔۔ شاعروں کي ساري شاعري۔۔۔ موسيقاروں کي ساري موسيقي۔۔۔ قدرت کي ساري خوبصورتي۔۔۔۔ سب کچھ ميرے پاس آ گءي ہے۔۔۔۔۔ تم جو ميرے پاس بيٹھے تھے۔۔۔۔ ايسا لگ رہا تھ۔۔۔۔ سب کچھ ہاں سب کچھ تو ميں نے حاصل کر ليا ہے۔۔۔۔

اور پھر ميں نے کچھ شعر تمہاري نظر کيءے تھے۔۔۔ اور تم انہيں سن کر مسکرا دي تھيں۔۔۔اس کے بعد ميري زندگي کا مقصد ميري ہر ايک چاہت ايسا لگا ميرے بہت قريب ہے ۔۔۔ ميري بانہوں ميں ۔۔۔ ‘ دو دل مل رہے ہيں مگر چپکے چپکے’ کي طرح ۔۔۔۔ تم ميرے ہو بس ميرے ہي ميرے ہو۔۔۔ اور نہ جانے کتني ہي شاعري ميرے ذہن ميں گردش کر رہي تھي۔۔۔۔

ميں کيسے وہ حال لکھ سکتا ہوں جس لمحے ميں نے تمہيں اپني بانہوں ميں بھر ليا تھا۔۔۔
وہ پل جب ميرے لمس کي گرمي تمہاري رگوں ميں جنگل کي آگ کي طرح سے پھيل گءي تھي۔۔۔۔ اور اس جنگل ميں تمہارے جس کي بڑھتي گھٹتي سي دھند مجھے کتنا مخمور کرتي ہے۔۔۔ نہ جانے کس انجانے نشے ميں مجھے چور کر ديتي ہے۔۔۔

تم۔۔ تم ميري بانہوں ميں تھيں۔۔۔۔ کتني ہي مدہوش سي کتني ہي معطر سي۔۔۔۔ اور ميں بھي تمہارے ہي نشے ميں مخمور نہ ميں تمہيں وہ لمحہ کيسے کيسے کيسے بتا سکتا ہوں جس لمحہ کمرے ميں تم ميري سينے يہ سر رکھے تھيں۔۔۔۔ ميں تمہارے بالوں ميں پيار سے انگلياں پھير رہا تھا اور نہ جانے دل ميں جو جو بھي کچھ تھا وہ کہتا جا رہا تھ۔۔۔۔
تہميں بتا رہا تھ۔۔۔ جاناں کتني محبت کرتا ہوں تم سے۔۔۔ کتني چاہت کي ہے تم سے۔۔۔ ميري دعاؤں کا ثمر ہوتم ميري محنت کا اثر ہو تم ۔۔۔ ميري محبت کے پاکيزہ جزبوں کي ترجمان ہو تم ۔۔۔۔۔۔ تمہاري پہچان ہوں ميں اور ميري جان ہو تم۔۔۔۔

اور پھر کتني دير تک عہد و پيماں جاري رہے ۔۔۔۔ کتني ہي دير تک تم نے اپني شرماءي سي لجاءي سي نازک سي ٹوٹي ٹوٹي سے آواز ميں مجھ سے کچھ باتيں کيں۔۔

اور پھر جزباتوں کے سمندر ميں نہ جانے کس طرح ايک طوفان سا برپا ہو۔۔۔۔
اس دن ہاں اس دن ميں۔۔۔
محبت کي شدتوں سے پاگل سرخ عروسي لباس ميں ملبوس اپني جان، اپني زندگي ۔۔۔ اپني شريک سفر۔۔۔ کے پاس آيا تھا۔۔۔۔
اور۔۔ اور۔۔۔۔ اور پھر محبت کی شدت میں سرشار، جذبات سے جلتی ہوءی ایک پاگل سی سرخ جوڑے میں لپٹی ایک معصوم سی، کسی کے پیار بھرے لہجے کی چاہت میں جیتی ایک دیوانی سی مگر میرے لیءے سراپاءے کاءنات سی، میری زندگی میری محبت کےپاس میں آیا تھا۔۔۔

اور پھر۔۔۔ تمہاری حیاء نے سارے گہر مجھ پر وار دیءے تھے۔۔۔اور ایک کہانی بن گءی تھی۔۔۔

ایک تا ابد دہراءی جانے والی کہانی۔۔۔۔

ہاں ہر روز شاءد کتنی ہی جگہوں پر ایسا ہوتا ہو گا۔۔۔۔ جب کوءی دیوانہ محبت کے جذبوں سے سرشار، سرخ جوڑے میں لپٹی ایک دیوانی کے پاس آتا ہو گا اور پیار کی شدت سے پاگل اس دیوانی کی حیاء اپنے سارے گہر وار کر ایک کہانی بناتی ہو گی۔۔۔۔

ایک تا ابد دہراءی جانے والی کہانی۔۔۔ محبت کی کہانی ۔۔۔۔ زندگی کی کہانی۔۔۔ جذبات کی کہانی۔۔۔۔ حیاء کی کہانی۔۔۔۔ پیار کی کہانی۔۔۔۔۔۔۔

ہاں اس ہی پیار کی ۔۔۔ جو شاءد ہمیشہ زندہ رہے گا۔۔۔

مجھے نہیں پتہ کہ میں نے جو کچھ لکھا اس کے ساتھ میں انصاف کر سکا یا نہیں، کافی عرصہ پہلے نوشی گیلانی کی نظم کہانی پڑھی تھی۔۔۔ اس تحریر کا آءیڈیا وہاں سے ہی لیا گیا ہے۔۔ اس امید کے ساتھ کے میرے دوستوں کو محبت کا یہ انداز بھی شاءد پسند آءے۔

 

 

Add Comment